پھر ذمہ داری قبول کرلی …..And then responsibility is accepted!

Many times we hear on TV that some individual spokesman of some organisation has accepted the responsibility and that acceptance is taken as “proof” that that particular terrorist act had been carried out by that organisation

بہت دفعہ ہوتا ہے کہ ٹی وی چینل پر آتا ہے کہ فلاں تنظیم کے ترجمان نے ذمہ داری قبول کرلی اور پھر یہ یقین کرلیا جاتا ہے کہ وہ دہشت گردی کا حملہ اسی تنظیم نے کروایا ہے

Often this type of acceptance is generated from the studio of some TV channel. At times some myth is created and repeated many times in order to authenticate the act and / or responsibility. For example a myth is created that head of the suicide bomber was found. I myself have supervised collection of DNA samples in such incidences white channel is repeating every other minute “the head of the suicide bomber is found”! How can head remain intact when the steal and metal structures are blown out? It’s like saying Mr. Ata’s passport found in 9/11!

اکثر اسطرح کے دعوے کسی ٹی وی اسٹوڈیو میں جنم لیتے ہیں! اور انہیں تواتر سے دھرایا جاتا ہے تاکہ لوگ اسے سچ تسلیم کرلیں کہ حملہ کسی خودکش بمبار نے کیا تھا- میں نے کئی مرتبہ ان حادثات میں ہلاک ہونے والوں کے ڈی این اے کے کیے سیمپل جمع کرنے کے عمل کی نگرانی کی ہے اور کبھی کسی سر کو نہیں پایا- بھلا جب لوہا اور اسٹیل سب پگھل گئے تو سر کیسے محفوظ رہ گیا – یہ ایسے ہی ہے جب کہا جاتا ہے کہ عطا کا پاسپورٹ ۹/۱۱ کے ملبے سے صحیح و سالم مل گیا

As a matter of fact there is engineered grand deception at several levels including;

1- The incriminated organisation is fake for example al/Qaeeda, ISIS, Bokoharam, Daeesh! These are not Muslim organisations created by the Zionists

2- The person claiming and accepting the responsibility is actually a paid worker of CIA or MI 6 for example Yousuf Ramzi and Mr. Aswat! Mr. Aswat was presented as mastermind of London bomb blasts while blasts were carried out by the Zionists. When Aswat visited USA, because of his attire looked like Talibans, some secret agencies were about to arrest him but they were told not to touch him, he is our man!

حقیقت یہ ہے کہ اس ذمہ داری کے قبول کرنے کے ڈرامے میں کئی سطح پر فراڈ ہوتا ہے مثلاً

۱- اکثر یہ تنظیمیں جعلی ہوتی ہیں مثلاً القاعدہ، داعش، بوکو حرام صیئونیوں نے بنائی ہیں اور انہیں مسلمانوں سے موسوم کردیا جاتا ہے پھر انکی آڑ میں مسلم ممالک پر حملہ کرنا آسان اور “جائز” ہوجاتا ہے-اسطرح کی جعلی تنظیموں میں پی ایل او، فلسطینی اتھاریٹی اور حزب اللہ بھی شامل ہیں- فلسطینی ااتھاریٹی کے صدر محمود عباس تو سرے سے مسلمان ہی نہیں ، وہ بہائی ہیں اور یاسر عرفات معروف ہم جنس پرست رہے ہیں

۲- اکثر جو شخص یہ ذمہ داری قبول کرتا ہے وہ سی آئی اے اور ایم آئی سکس کا تنخواہ دار ملازم ہوتا ہے- وہ ہر طرح کا حلیہ دھار سکتا ہے اور ہر قسم کی ذمہ داری قبول کرسکتا ہے مثلاً یوسف رمزی جو عیسائی ہےاور مسٹراسواط جسے لندن دھماکوں کا ماسٹر مائنڈ بنا کر پیش کیا گیا- جب اسواط صاحب امریکہ آئے تو انکے طالبانی حلئے کی وجہ سے انہیں گرفتا کرنے کی کوشش کی گئی لیکن انہیں بتایا گیا کہ اسے مت چھوئیں، یہ ہمارا آدمی ہے

Rita Katz master mind of fake videos under her organization SITR. These fake videos are broadcasted as News by the fake media all over the world

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s